Royal Romance Rumors Debunked: Are Kate Middleton & Prince William Still Together?

Royal Romance Rumors Debunked

شہزادہ ولیم اور کیٹ مڈلٹن کے درمیان رشتہ مضبوط ہے، ماہرین کا دعویٰ – سوشل میڈیا پر پھیلائی جانے والی افواہوں کی حقیقت جانئے!

پاکستانیوں کی طرح دنیا بھر کے لوگ برطانوی شاہی خاندان کی خبروں پر بھی توجہ دیتے ہیں۔ آج ہم آپ کو ایک ایسی خبر سنا رہے ہیں جو شہزادہ ولیم اور کیٹ مڈلٹن کے مداحوں کے لیے خوشی کا باعث ہوگی، کیونکہ حال ہی میں ان کی شادی ٹوٹنے کی جو افواہیں پھیل رہی تھیں، ان کا پردہفاش ہوگیا ہے۔

ماہر کا دعویٰ: شہزادی اور شہزادہ کا رشتہ پہلے سے زیادہ مضبوط

شاہی خاندان کے بارے میں جاننے والے ایک مشہور ماہر، رچرڈ پالمر، نے اس بارے میں بات کرتے ہوئے کہا ہے کہ انہوں نے قریب سے دیکھا ہے کہ کیٹ اور ولیم کا رشتہ “پہلے سے کہیں زیادہ مضبوط ہے”۔ انہوں نے مزید کہا کہ “میں نے انٹرنیٹ پر ان کی شادی کے بارے میں طرح طرح کی باتیں پڑھیں، لیکن مجھے ان میں سے کوئی بھی بات سچی لگتی نہیں۔ خاص طور پر سوشل میڈیا پر تو کچھ لوگ بغیر کسی ثبوت کے ایسی افواہیں پھیلاتے ہیں، صرف اس لیے کہ لوگوں کی توجہ حاصل کر سکیں۔”

رچرڈ پالمر نے اپنی بات کو آگے بڑھاتے ہوئے کہا کہ “جب بھی میں نے ان دونوں کو قریب سے دیکھا ہے تو وہ ایک دوسرے کے بہت قریب لگتے ہیں۔ ان کی جسمانی حرکات اور بات چیت سے یہ صاف ظاہر ہوتا ہے کہ وہ ایک دوسرے سے بہت خوش ہیں اور ان کی شادی ایک कामयाاب شادی ہے۔”

See also  Ramadan 20500 Relief Package and the Benazir Income Support Program

ماں کے دن کی تصویر سے پھیلی تھیں علیحدگی کی افواہیں

آپ کو یاد ہوگا کہ کچھ عرصہ پہلے سوشل میڈیا پر ایک تصویر وائرل ہوئی تھی جس میں کیٹ مڈلٹن ماں کے دن کے موقع پر اپنے ہاتھ میں شادی کی انگوٹی نہیں پہنے ہوئے تھیں۔ اس تصویر کے سامنے آنے کے بعد لوگوں نے قیاس لگایا کہ شائد شہزادہ ولیم اور کیٹ مڈلٹن علیحدگی لینے کا سوچ رہے ہیں۔ لیکن بعد میں پتا چلا کہ یہ تصویر دراصل ایک فوٹو شاپ کی مدد سے بنائی گئی جعلی تصویر تھی۔ اصل تصویر کو بڑی کمپنیوں نے اپنے پلیٹ فارمز سے ہٹا دیا گیا تھا اور خود کیٹ مڈلٹن نے بھی اس غلط تصویر کے بارے میں معافی مانگی تھی۔

لہٰذا، آئندہ جب بھی آپ سوشل میڈیا پر کسی قسم کی شاہی خاندان سے متعلق کوئی خبر پڑھیں، تو اس کی سچائی کی تصدیق کر لیں۔ بغیر ثبوت کے پھیلائی جانے والی افواہوں پر یقین نہ کریں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *